غالب

اَسد کو بت پرستی سے غرض درد آشنائی ہے نہاں ہیں نالہء ناقوس میں، درپردہ، ’’یا رب‘‘ ہا  

Read More

سہرا ۔۔۔۔ غالب

سہرا ۔۔۔۔ چرخ تک دُھوم ہے، کس دُھوم سے آیا سہرا چاند کا دائرہ لے، زہرہ نے گایا سہرا جسے کہتے ہیں خوشی، اُس نے بلائیں لے کر کبھی چوما، کبھی آنکھوں سے لگایا سہرا رشک سے لڑتی ہیں، آپس میں اُلجھ کر لڑیاں باندھنے کو جو ترے سر پہ، اُٹھایا سہرا صاف آتی ہیں نظر آبِ گہر کی لہریں جنبشِ بادِ سحر نے جو ہلایا سہرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیوانِ غالب کامل مرتبہ: کالی داس گپتا رضا

Read More

غالب ۔۔۔ نہ بھولا اضطرابِ دم شماری، انتظار اپنا

نہ بھولا اضطرابِ دم شماری، انتظار اپنا کہ آخر شیشہء ساعت   کے کام آیا غبار اپنا زبس آتش   نے فصلِ رنگ میں رنگِ دگر پایا چراغِ گُل سے ڈھونڈھے   ہے چمن میں شمع خار اپنا اسیرِ   بے زباں ہوں، کاشکے! صیادِ   بے پروا بہ دامِ جوہرِ آئینہ، ہو جاوے شکار اپنا مگر ہو مانعِ دامن کشی، ذوقِ خود آرائی ہوا ہے نقش بندِ آئینہ، سنگِ مزار اپنا دریغ! اے ناتوانی! ورنہ ہم ضبط آشنایاں   نے طلسمِ رنگ میں باندھا تھا عہدِ اُستوار اپنا اگر آسودگی  ہے مدعائے رنجِ   بے تابی…

Read More

غالب ۔۔۔۔ نقش فریادی ہے کس کی شوخیء تحریر کا

نقش فریادی ہے کس کی شوخیء تحریر کا کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا کاوکاوِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شِیر کا جذبہء بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے سینہء شمشیر سے باہر ہے، دم شمشیر کا آگہی، دامِ شنیدن جس قدر، چاہے بچھائے مدعا عنقا ہے، اپنے عالمِ تقریر کا شوخیء نیرنگ، صیدِ وحشتِ طائوس ہے دام، سبزے میں ہے ، پروازِ چمن تسخیر کا لذتِ ایجادِ ناز، افسونِ عرضِ ذوقِ قتل نعل، آتش میں ہے تیغِ یار سے، نخچیر کا…

Read More