فیس بُک کے آئینے میں (حامد یزدانی کے لیے ایک نظم) ۔۔۔۔۔۔۔۔ خالد علیم

فیس بُک کے آئینے میں (حامد یزدانی کے لیے ایک نظم) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حامد یزدانی! اے حامد یزدانی! تم کس خواب نگر میں اپنا دل کش ماضی کھوج رہے ہو ماضی تو ماضی ہے — اپنا آج بھی ماضی ہو جائے گا نئے دنوں میں کھو جائے گا نئے دنوں میں ایک نیا کیا خواب نگر آباد کروگے؟ خواب نگر—تو ایک کھنڈر ہے وحشت کا، وحشت میں رکھی دانائی کا دہشت کا، دہشت میں عریاں تنہائی کا خواب نگر جو خواب ہے دل سے سودائی کا کیا تم بھی سودائی ہو؟…

Read More

مراتب اختر

عجب وہ ساعتِ پرواز تھی کہ جب مجھ کو زمین دور لگی، آسماں قریب لگا

Read More