قابل اجمیری

نجانے زندگی کیسے گذر گئی, اے دوست!
کہیں ٹھہر کے ترا انتظار بھی نہ کیا

Related posts

Leave a Comment