خاور اعجاز ۔۔۔ (Jane Reichhold)

The whole sky In a wide field of flowers One Tulip بامِ فلک ہے یا پھولوں کے باغیچے میں ایک گلِ لالہ A long journey Some cherry petals Begin to fall ایک طویل سفر چیری کی کچھ پنکھڑیاں گِرنے کا آغاز Winter cold Finding on a beach An open knife یخ بستہ سردی ڈھونڈ رہی ہے ساحل پر ایک کھُلا چاقو Wild flowers The early spring sunshine In my hand کچھ جنگلی غنچے اوّل موسمِ گل کی دھوپ میرے ہاتھوں میں

Read More

نسیمِ سحر ۔۔۔ ہائیکو (جاپانی ہائیکو نگار یوشی میکامی اِسّا کے ہائیکوز کا ترجمہ)

A man, just one… Also a fly, just one.. In the huge drawing room تنہائی کا راج اتنے کشادہ کمرے  میں میں اور اِک مکھّی O snail Climb Mount Fuji But slowly, slowly ! رینگتے کیڑے، تُو کوہِ فُجی پر چڑھ تو سہی لیکن۔۔۔ آہستہ Napping at midday I hear the song of rice planters and feel ashamed of myself Kobayashi Issa خود پر شرمندہ  دھوپ میں محنت کش مصروف اونگھ رہا ہوں مَیں

Read More

خاور اعجاز ۔۔۔ ہائیکو تراجم(Jane Reichhold)

A spring nap Downstream cherry trees in bud موسمِ گل میں نیند کی چھپکی جیسے موجود ہوں شگوفوں میں لبِ دریا درخت چیری کے Long hard rain Hanging in the willows Tender new leaves سردیوں کی طویل بارش میں پیڑ پر جھولتے ہوئے قطرے تازہ پتّوں کا پیش خیمہ ہیں Ancestors The wild plum blooms again آبأ و اجداد جنگلی آلوچے جیسے پھِر سے کھِل اُٹھیں Moving into the sun The pony takes with him Some mountain shadow سورج میں چلتے گھوڑا لے گیا اپنے ساتھ پربت کا سایہ

Read More

خاور اعجاز ۔۔۔ ہائی کو تراجم

The ants are walking under the ground And the pigeons are flying over the steeple And in between are the people (Elizebeth Madox Roberts) چیونٹیاں چل رہی ہیں زیرِ زمیں اور کبوتر فضائوں میں رقصاں درمیاں اِک ہجوم لوگوں کا ………………… Dusk A lone car going the same way As the river (George Swede) شام کے سرمئی دھندلکے میں ایک ہی سمت میں رواں دونوں بیل گاڑی بھی اور دریا بھی Leaf in my palm its stem extends My life line (Helen Daive) ایک پتّا مِری ہتھیلی پر اس کی…

Read More

مولا یا صلِ وسلم ۔قصیدہ ء بردہ شریف:  ترجمہ نگار : سید عارف معین بلے

مولا یا صلِ وسلم ۔قصیدہ ء بردہ شریف  ترجمہ نگار : سید عارف معین بلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (1) جَل اُٹھی کیا شمعِ یادِ دوستانِ ذی سَلَم خونِ دل بہنے لگا آنکھوں سے میری ایک دم (2) جھونکا کوئے کاظمہ سے آیا ہے یا پھر حضور بجلی چمکی، ہوگیا روشن شبستانِ اِضَم (3) ہو گیا کیا؟ جو تری آنکھوں سے جاری ہے جھڑی کیا ہوا ہے؟ دل پہ کیا ٹوٹا ترے کوہِ ستم (4) چُھپ نہیں سکتی محبت‘ ہے عبث تیرا خیال ہے ترے سوزِ دروں کا آئینہ یہ چشمِ نم (5)…

Read More

ازلا نیگرا ۔۔۔ پابلو نیرودا (ترجمہ: تبسم کاشمیری)

ازلا نیگرا(پابلو نیرودا) ترجمہ: تبسم کاشمیری۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سفید جھاگ، ازلا نیگرا میںمارچ کا مہینہیہ جھاگ کم زور کر رہی ہےسمندر کے بے پایاں پیالے سے لبالب ہو کرچھلکتے ہوئے پانیوں کومتقاطع ہوتے ہوئے پرندوں کیطویل سست پروازیںاور یہاں نمودار ہوتا ہے زرد رنگمہینہ تبدیل کرتا ہے اپنا رنگاور میں ہوں پابلو نیرودامیں ابھی تک پہلے جیسا ہی ہوںمیرے پاس ہے محبت، شبہاتاور کچھ واجب الادا قرضےاور میرے پاس پھیلا ہوا سمندر ہےلہر در لہر بڑھتے ہوئے اس کے کارکنمیں ہوں اتنا بے چینکہ ظہور میں نہ آئی ہوئی قوموں تکجا پہنچتا ہوںمیں…

Read More

بورخیس/محمد عاصم بٹ ۔۔۔ شاخ دار راستوں والا باغ

شاخ دار راستوں والا باغ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لڈل ہارٹ کی ’’تاریخ جنگ عظیم‘‘ کے صفحہ ۲۴۲ پر آپ کو لکھا ملے گا کہ ۲۴ جولائی ۱۹۱۶ء کو سیرے مونٹا بن سرحدپرتیرہ برطانوی ڈویژنوں (جن کے ہمراہ ۱۴ سو توپیں بھی تھیں) کے حملے کا منصوبہ بنایاگیا جسے بعدازاں ۲۹ جولائی کی صبح تک موخر کر دیا گیا۔ کیپٹن لڈل ہارٹ کے مطابق اس التواء کا سبب غیر متوقع تند بارشیں تھیں۔ایک تاخیر جیسا کہ ثابت ہوا، جس سے کہیں کوئی فرق نہیں پڑا۔ درج ذیل عبارت جسے تسنگ تائو میں ہوشیول…

Read More

پریم کتھا کا ایک بند ۔۔۔ (امارو ترجمہ: میرا جی)

Read More

امیر خسرو ۔۔۔ من از دست دل دوش دیوانہ بودم

من از دست دل دوش دیوانہ بودم ہمہ شب در افسون و افسانہ بودم میں کل دل کے ہاتھوں سے دیوانہ تھا سراپائے افسون و افسانہ تھا ز دل شعلہء شوق می زد بیادش بران شعلہء شوق، پروانہ بودم کوئی یاد دل سے اُبھر کر اُٹھی فروزاں تھا شعلہ، مَیں پروانہ تھا بمسجد رود صبح ہر کس بمذہب من نا مسلمان بہ بتخانہ بودم مسلماں تھے مسجد میں محوِ دعا مَیں کافر رواں سوئے بت خانہ تھا دل و جان و تن با خیالش یکی شد ہمین من در آن…

Read More

فرخی سیستانی

ترا چہ غم کہ ترا ہر کسے بجاے من است مرا غم است، مرا ہیچ کس بجاے تو نیست (فرخی سیستانی) تمھیں تو کیا غم، تمھیں تو ایک عالم ہے بدل میرا مگر مَیں کیا کروں، میرے لیے تو بس تمہیں تم ہو (ترجمہ: ڈاکٹر عندلیب شادانی) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجموعہ کلام: نشاطِ رفتہ ناشر: شیخ غلام علی اینڈ سنز سنِ اشاعت: ۱۹۵۱ء

Read More