خالد علیم ۔۔۔ آنکھ اُس کی آج آئنہ دارِ نظارہ ہے

آنکھ اُس کی آج آئنہ دارِ نظارہ ہے کیا دل کا اعتبار کہ بارِ نظارہ ہے دیکھیں اگر تو چشمِ تصور میں وہ نگاہ حُسنِ نظر ہے اور شمارِ نظارہ ہے جل جل کے بجھ رہا ہے دریچوں میں عکسِ گل یہ شامِ ہجر ہے کہ بہارِ نظارہ ہے ہر سمت ہیں سراب کے منظر کھنچے ہوئے کیا خوب تیری راہ گزارِ نظارہ ہے تارے بجھے ہوئے ہیں، سسکتی ہے چاندنی یہ رات ہے کہ سر پہ غبارِ نظارہ ہے گرتی ہے قطرہ قطرہ شفق صبحِ ہجر میں نم دیدۂ…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ رباعیات

سورج ہے عجیب، کچھ اُجالا کرکے اک اگلی صبح کا تقاضا کرکے ہر رات ستاروں کو بجھا دیتا ہے ہر روز نکلتا ہے تماشا کرکے ٭ حیرت کی فراوانی گھر پر ہے میاں باہر بھی گھر جیسا منظر ہے میاں آنکھیں نہ جلا کہ اندروں جل جائے خاموش کہ خامشی ہی بہتر ہے میاں ٭ کھِل سکتا ہے گوبر سے گُلِ ریحانی جوہڑ سے نکل سکتا ہے میٹھا پانی یہ جَہلِ مرکّب جو نہیں تو کیا ہے؟ نادان کی نادانی پر حیرانی ٭ ایسا بھی بے خبر کوئی دل ہوگا؟…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ میرا جی کے نام

میرا جی کے نام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میرا جی تم میرا جی ہو میراجی ہم جانتے ہیں تم صرف ثنااللہ تھے پہلے آخر اک دن میراسن کے عشق میں میرا جی کہلائے اور جب میرا جی کہلائے تم نے ثنا اللہ کے دل کی دھڑکن کو اپنے اندر مار دیا جانتے ہیں ہم تم اچھی نظمیں لکھتے تھے منٹو کے افسانوں جیسی کرشن کے سچے کرداروں میں ڈوبی نظمیں آدھے دھڑ کے  انسانوں  پر پوری نظمیں حیوانوں پر پوری نظمیں لیکن —سچ ہے منٹو نے اپنے خاکے میں جتنے رنگ بھرے تھے…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ اے آنکھ بہت لہو نہ ٹپکا

اے آنکھ بہت لہو نہ ٹپکا جائے گا کہاں یہ جی کا لپکا آئینہ کلام کر رہا ہے اے میرے جنوں! پلک نہ جھپکا جب عشق رگوں میں تیرتا تھا کیا زور تھا حشر سوز تپ کا یوں ہی تو جگر نہ خوں ہوا تھا دل نے دیا راستہ جھڑپ کا یوںہی نہیں کچھ اِدھر اُدھر ہم رشتہ کوئی راست سے ہے چَپ کا سینے میں اُتر گیا تھا بھالا اُس آتشِ جاں تپاں کی تَپ کا کس خواب نے رات آنکھ بھر دی منہ پر دیا تیرے غم نے…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ اِدھر اُدھر کی مثالوں میں ایک مَیں بھی سہی

اِدھر اُدھر کی مثالوں میں ایک مَیں بھی سہی ترے عجیب سوالوں میں ایک مَیں بھی سہی کشودہ کار بہ پیرایۂ جمال ہے کون خراب و خستہ مقالوں میں ایک مَیں بھی سہی بہت سے لوگ ہمیں چھوڑ کر روانہ ہوئے سو اتنے چھوڑنے والوں میں ایک مَیں بھی سہی لہو جگر کا ہے، آنکھوں سے بہنے والا ہے چلیں، چھلکتے پیالوں میں ایک مَیں بھی سہی کل اُس نگر میں تھا آزردگانِ دل کا ہجوم تو آج اُن کے حوالوں میں ایک مَیں بھی سہی خدا کا شکر کہ…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ نیچے کون جائے … !!

رات کے بارہ  …… نہیں! ….. شاید! ۔۔۔۔گھڑی کی سوئیاں اک دوسرے سے ۔۔۔۔چند لمحوں کی مسافت پر کھڑی ہیں ۔۔۔۔سیڑھیوں کے ساتھ کمرے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دھوأں سا بھر گیا ہے ۔۔۔۔میز پر سگرٹ کے پیکٹ میں فقط، ۔۔۔۔اک آخری سگرٹ بچا تھا، ۔۔وہ بھی اب سلگا لیا ہے تیسری منزل سے نیچے سب دکانیں بند ہیں ۔۔اور سر کے اوپر، چھت پہ خالی آسماں ہے رات لمبی رات ہے، ۔۔۔۔سرما زدہ بستر میں ویرانی بچھی ہے آخری سگرٹ بھی آخر …… آخری ہے ہاتھ کی پوروں میں جلتی راکھ بھرتی…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ نمودِ برگ پہ زردی، زمین گیلی ہے

نمودِ برگ پہ زردی، زمین گیلی ہے درختِ سبز نے دریا کی پیاس پی لی ہے تری نگاہ سے گرادب آشنا ہو جائے اسی لیے تو سمندر کی آنکھ نیلی ہے ستارے ٹوٹ رہے ہیں ہماری قسمت کے سو لگ رہا ہے گرفت آسماں کی ڈھیلی ہے حصار میں کہیں لے لے نہ پھر دل و جاں کو تمھاری یاد کی خوشبو بڑی رسیلی ہے اٹھی جو سینے سے، ہونٹوں میں دب گئی آواز یہ کس طلسم نے میری زبان کیلی ہے تو دل کی آنکھ سے دیکھے گا کیا…

Read More

خالد علیم ۔۔۔ رباعیات

رباعیات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دنیا کہ سمٹتی ہی چلی جاتی ہے رشتوں کی تڑپ کس کو تڑپاتی ہے صدیوں کی خامشی ہے اپنوں کو محیط موجود میں محشر کی صدا آتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنی بھی نہ کر حکایتِ شوق دراز تارِ رگِ جاں سے جل اُٹھے نغمۂ ساز آنسو ٹپکیں تو جسم و جاں جلنے لگیں سانسیں ٹوٹیں تو ٹوٹ جائے آواز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دھوکا ہے، سراب ہے؟ سزا ہے؟ کیا ہے؟ آئینہ ہے سامنے، خفا ہے؟ کیا ہے؟ خود پر ہی بار بار پڑتی ہے نظر میں ہوں؟ تُو ہے؟ کوئی یا…

Read More