عامر سہیل ۔۔۔ اک وظیفہ ہے کسی درد کا دہرایا ہوا

اک وظیفہ ہے کسی درد کا دہرایا ہوا جس کی زد میں ہے پہاڑوں کا دھواں آیا ہوا یہ ترے عشق کی میقات، یہ ہونی کی ادا دھوپ کے شیشے میں اک خواب سا پھیلایا ہوا باندھ لیتے ہیں گرہ میں اسی منظر کی دھنک ہم نے مہمان کو کچھ دیر ہے ٹھہرایا ہوا طائرو ابر و ہوا بھی ہیں اسی الجھن میں کیسے دو ہونٹوں نے اک باغ ہے دہکایا ہوا چھید ہیں عمر کی پوشاک پہ تنہائی کے خوش نما قریوں میں ہوں آپ سے اکتایا ہوا رات آتی…

Read More

مقبول عامر ۔۔۔ فردِ جرم

فردِ جرم ——– فقیہِ‌ شہر بولا بادشہ سے بڑا سنگین مجرم ہے یہ، آقا! اِسے مصلُوب ہی کرنا پڑے گا کہ اس کی سوچ ہم سے مختلف ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مجموعہ کلام: دیے کی آنکھ ناشر: زرتار پبلی کیشنز، اسلام آباد سنِ اشاعت: جنوری ۱۹۹۰ء (بار اول)

Read More

امیر مینائی

میری حالت پر گرے ہیں بارہا اشک چشمِ روزنِ دیوار سے

Read More