فرہاد احمد فگار ۔۔۔ اردو نظم :ایک مضبوط روایت

اردو نظم نگاری کی باقاعدہ ابتدا تو سید ولی محمد نظیر اکبر آبادی سے ہوگئی تھی لیکن یہ صنف انجمن پنجاب کے قیام کے بعد زیادہ ثروت مند ہوئی۔ بیس ویں صدی کے آغاز اور سرسید احمد خان کی تحریکِ علی گڑھ سے قبل نظیر ہی ایک ایسا نام تھا جس نے اردو نظم کی صورت میں اردو ادب میں اضافہ کیا۔ وہ ایک ایسا شاعر تھا جس نے اپنی نظم کے ذریعے وہ الفاظ و تراکیب بھی اردو ادب کے دامن میں بھر دیں جن سے پہلے اردو شاعری…

Read More

منچندا بانی— ایک گم شدہ خواب کا مغنی ۔۔۔ ارشد نعیم

منچندا بانی — ایک گم شدہ خواب کا مغنی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منچندا بانی نے آنکھ کھولی تو ایک ہزار سال کے تجربات سے تشکیل پانے والی ہند اسلامی تہذیب ایک حادثے کی طرف بڑھ رہی تھی۔ ہندوستان آزادی کی تحریک کا مرکز بنا ہوا تھا اور ہندوستان کی تقسیم آخری مراحل میں تھی اور ایک ایسی ہجرت کے سائے دو قوموں کے سر پر منڈلا رہے تھے جو لہو کی ایک ایسی لکیر چھوڑ جانے والی تھی جسے صدیوں تک مٹانا ممکن نہیں ہوگا۔ یہ احساس، یہ منڈلاتا ہوا خطرہ ہمیں…

Read More

باتیں ندیم کی (انٹرویو) ۔۔۔۔۔ حامد یزدانی

باتیں ندیم کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ’’کتاب کبھی نہیں مر سکتی‘‘ (پاکستان کی معتبر ترین ادبی شخصیت جناب احمد ندیم قاسمی نے یہ انٹرویو، اپنی ۸۲ ویں سال گرہ پر ریکارڈ کروایاتھا) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حامد یزدانی: ندیم صاحب! آپ فرماتے ہیں: گو سفر تو دھوپ نگر کا ہے، یہ طلسم حسنِ نظر کا ہے  کہیں چھائوں قربِ جمال کی، کہیں فیضِ عشق کے سائے ہیں تو دھوپ چھائوں کے اِس سفر کے 82ویں پڑائو پر، جب احبابِ ندیم آپ کی سالگرہ کا جشن منا رہے ہیں، آپ خود کیا محسوس کر رہے ہیں؟…

Read More

کیا روگ لگا بیٹھے ۔۔۔ اختر شیرانی

کیا روگ لگا بیٹھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا روگ لگا بیٹھے دِل ہم کو لُٹا بیٹھا، ہم دل کو لُٹا بیٹھے کیا روگ لگا بیٹھے مِٹ جائے یہ سینے سے اِس عشق میں جینے سے، ہم ہاتھ اُٹھا بیٹھے کیا روگ لگا بیٹھے دم عشق کا بھرتے ہیں ہم یاد اُنہیں کرتے ہیں، وہ ہم کو بُھلا بیٹھے کیا روگ لگا بیٹھے لِکھّا تھا یہ قسمت میں آخر کو محبّت میں، ہم جان گنوا بیٹھے کیا روگ لگا بیٹھے!

Read More

اے عشق کہیں لے چل ۔۔۔۔۔ اختر شیرانی

اے عشق! کہیں لے چل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اے عشق! کہیں لے چل، اِس پاپ کی بستی سے نفرت گہِ عالم سے، لعنت گہِ ہستی سے اِن نفس پرستوں سے، اِس نفس پرستی سے دُور …. اور کہیں لے چل اے عشق! کہیں لے چل ہم پریم پُجاری ہیں، تُو پریم کنہیا ہے تُو پریم کنہیا ہے، یہ پریم کی نیّا ہے یہ پریم کی نیّا ہے تُو اِس کا کِھویّا ہے کچھ فکر نہیں، لے چل اے عشق! کہیں لے چل بے رحم زمانے کو اب چھوڑ رہے ہیں ہم بے…

Read More